میں اگر زیست کی

اس کہانی کو

تصنیف خود کررہا ہوں

تو کردار میرے بنائے ہوئے

کیوں نہیں ہیں،

 

یہ کہانی ورق در ورق

باب در باب

میرے تصور کے برعکس

تبدیل ہوتی رہی ہے،

 

میرا احساس خود مجھ کو

جبری مشقت کا قیدی

بنائے ہوئے ہے،

 

مگرآسمان محبت میں

ہلکی سی جنبش ہوئی ہے

اور مجھ کو یقیں ہے

میرے حصے کی روشن کرن

میرے زنداں کی جانب

روانہ ہوئی ہے۔

2 thoughts on “

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s