In Prayers

 

 

Namaz is maqbool poetry;

the traits of a considerate Allah

have somehow stalled to trickle

 

to a heart that wouldn’t listen

to the poems I observe

in the night long vigils.

 

Yet when I stand before the Lord

or when I prostrate,

an image gets vivid,

adding to the metaphor,

so much so

to be the theme of the poem.

میں اگر زیست کی

اس کہانی کو

تصنیف خود کررہا ہوں

تو کردار میرے بنائے ہوئے

کیوں نہیں ہیں،

 

یہ کہانی ورق در ورق

باب در باب

میرے تصور کے برعکس

تبدیل ہوتی رہی ہے،

 

میرا احساس خود مجھ کو

جبری مشقت کا قیدی

بنائے ہوئے ہے،

 

مگرآسمان محبت میں

ہلکی سی جنبش ہوئی ہے

اور مجھ کو یقیں ہے

میرے حصے کی روشن کرن

میرے زنداں کی جانب

روانہ ہوئی ہے۔